تعلیمخواتین کا صفحہکالم نگار

امید نو

فریدہ سلطانہ فَری

فَری نامہ

 

نیے سال کا سورج اپنی پوری اب وتاب کے ساتھ طلوع ہوچکا ہےاورہم سب نئی امیدوں اورامنگوں کے ساتھ نئے سال کا اغاز کرکے زندگی کی جدوجہد میں پھر سے مصروف عمل ہوگئے ہیں۔ اب اسکا فیصلہ اگے وقت ہی کرئے گا کہ ہماری امید یں اورخواب پورے ہوں گیں یا ہم انہی امیدوں اورپرانے خوابوں کا بوجھ لیکر پھرسے اگلا سال شروع کریں گیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگرحقیقت کی انکھ سےدیکھا جائے توہمارے ارد گرد سبھی لوگ اپنے کاندھوں پرعرصے سے ٹوٹے ہوئے خوابوں اورمجبوریوں کا بوجھ لیے پھر رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ کوئی بیماری کا بوجھ۔۔۔۔۔۔۔ تو کوئی غربت کا، کوئی بے روزگاری و گھریلو تنازعات کا ،کسی کو رشتوں کے بچھڑنے کا غم تو کسی کو رشتوں کے بدلنے کی فکر۔۔۔۔۔۔۔غرص لوگ مختلف مسائل و مشکلا ت و ٹوٹے ہوئے خّوابوں کے ساتھ ساتھ نئی امیدیں لیکرنئے سال میں داخل ہوچکے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سنا ہے کہ ہمارے معاشرے کا وہ حساس طبقہ جسے عورت ،خاتون یا بچی،ان مختلف ناموں سےپکاراجاتا ہے اس نے بھی اپنے ٹوٹے ہوئےخوابوں کےساتھ ساتھ نئی امیدیں لیکرنَئے سال کا اغآز کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جب بات امیدوں اورخوابوں کی ہورہی ہے تو میں بھی انہی کے فہرست میں شامل ہوں کیونکہ میرے خواب و امیدیں بھی ان ہی سے منسلک ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور سب سے اہم میرے خواب جو ریزہ ریزہ ہیں ان کا بھی تعلق اسی عورت ذات سے ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیونکہ ہمارے معاشرے میں یہ حساس طبقہ جن جن معاشی ،معاشرتی ،سماجی مسائل و مشکلا ت کا شکار ہے وہ بیان کرنے کے قابل نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر ہمارے ہاں بعض خواتین بینادی سہولیات سے بھرپوراچھی زندگی بھی گزار رہی ہیں۔۔۔ یہاں میرا اشارہ وہ خواتین ہیں جو زندگی کے ساتھ صحیح معنوں میں جنگ لڑ رہی ہیں اورایک نہ ختم ہونے والی جدوجہد میں مصروف ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگرمیں نا امید بھی نہیں مجھے یقین ہے کہ ہم اس سا ل نو میں ان تمام مسائل پربہت نہ سہی کچھ حد تک توقابوسکیں گیں جس کی بیناد پرعورتوں کو سہولیات سے بھرپورزندگی میسرہوگی اوران کے بنیادی حقوق ان کو میسر ہوںگیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جیسے کہ،جا یئداد یا وراثت میں حق،مرضی کی شادی ،صحت کی سہولیات تک دسترس ،گھروں کے اندر یکساں اورمساوی سلوک ،اور گھروں سے باہرمعاشرتی تحفط اور اس کی یقین دھانی کے لئے قانون سازی خآص کر ملازمت کی جگہوں پر ، معیاری اور بینادی تعلیم تک سب کی رسائی ،معاشی خود مختاری ،جنسی استحصال سے تحفظ وغیرہ وغیرہ یہ تمام ایسے حقوق ہیں جن کو اللہ نے توعورت کوعطا کی ہے مگرجب کام ہم انسانون کے ہاتھ ائی تو ہم لوگوں نے اپنے مفاد اوراسانی کی بیناد پرطرز زندگی ترتیب دی جس کے نتیجے میں معاشرے کا توازن بھی بگڑ گیا اور اس کے ساتھ ساتھ ایک مسِئلے نے بہت سے اورمسئلوں کو دعوت دے ڈالی۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Back to top button